Home    Health

صحت
یادداشت کی کمزوری کیوں واقع ہوتی ہے؟
یادداشت کی کمزوری کیوں واقع ہوتی ہے؟

سورج کی پہلی کرن نکلتے ہی ہر طرف چہل پہل بڑھنے لگی۔ روزانہ کے معمول کے مطابق بچوں اور اپنے میاں کا ناشتہ بنانے کے لیے رابیعہ (فرضی نام) بے حد مصروف تھی۔ اسی دوران ماتھے پر تیوری چڑھائے ان کے شوہر اجمل سر پر آکھڑے ہوئے۔ رابیعہ نے گھبرا کردیکا اور آنکھوں ہی آنکھوں میں وجہ پوچھ ڈالی۔ ’’تم نے میری نیوی بلیو فائل کہاں رکھی ہے؟‘‘ بہت دیر سوچنے کے بعد بھی رابیعہ کو جب جواب نہ مل پایا کہ فائل کہاں رکھی تو کہا پتہ نہیں میں کہاں رکھ کر بھول گئی۔ اور بس یہیں سے جھگڑا شروع ہوگیا۔ بچے الگ سہمے بیٹھے ناشتے کو، تو کبھی لڑے جھگڑتے ماں باپ کو دیکھتے۔ ’’یہ تمہارا روز کا معمول ہے‘‘ اجمل نے بیزاریت بھرے لہجے میں کہا اور روزانہ جھگڑے کا اختتام اسی جملے پر ہوا کرتا کیونکہ… خیر اس وقت کچھ لوگ یہ سوچ رہے ہوں گے کہ اگر رابیعہ بیچاری فائل رکھ کر بھول گئی تو اس میں اس کا کیا قصور؟ اور کچھ لوگوںکا یہ بھی خیال ہوگا کہ شوہر نے خود اپنی چیزوں کا خیال کیوں نہیں رکھا۔ تو آپ کی ہمدردی کس کے ساتھ ہے؟ خیر قارئین کی اطلاع کے لیے عرض ہے کہ یہ تو جھگڑوں کی ایک ہلکی سی جھلک ہے اس طرح کے کئی جھگڑے روزانہ کی بنیاد پر ہوتے ہیں جن محرک رابیعہ کی بھولنے، خاص طور پر چیزیں رکھ کر بھول جانے کی عادت ہے۔


تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ محفوظ ہیں۔
Copyright © 2019 Urdu News. All Rights Reserved